صحت سے متعلق مضامین اور تدابیر چہرے اور جلد کے مسائل

Breaking

Post Top Ad

Tuesday, September 10, 2019

آنکھوں کی حفاظت کیجیے



   
نکھوں کی عام شکایات
آنکھیں جسم کا اہم حساس حصہ ہیں ۔لہٰذا ان سے ذرا سی بے پرواہی بڑے نقصان کا باعث بن سکتی ہے۔آشوب چشم(آنکھ کی جھلی کا ورم)آنکھوں کی عام بیماری ہے ۔یہ آنکھ کے اگلے حصے کی باریک جھلی کا انفیکشن ہے جو خاصی بے چینی کا سبب ہوتا ہے ۔یہ انفیکشن چھوٹے اور بڑے بچوں اور کنٹیک لینس استعمال کرنے والوں میں عام ہے۔
بیکٹیریا کے اثرات کے باعث آنکھوں سے پیلا مادہ نکلتا ہے جو آنکھ میں ڈالنے والے اینٹی بائیوٹک قطروں سے صاف ہو جاتاہے۔اگر آنکھوں میں خارش اور آنکھوں سے پانی بہنے لگے تو آنکھ کی جھلی پر ایسے ورم کا امکان ہے جس کی وجہ الرجی ہو۔یہ کیفیت عموماًHay Feverکے موسم میں ہوتی ہے۔
لیکن سال کے دوسرے حصوں میں بھی ہو سکتی ہے۔

بصارت کی بہتری کے لیے چند تجاویز
آنکھوں کو صحت مند رکھنے کے لیے ضروری ہے کہ انہیں صحت بخش غذا اور ورزش کے مواقع فراہم کیے جائیں۔

وہ لوگ جو عینک کا استعمال کرتے ہیں انہیں چاہیے کہ عینک کو دن میں کچھ دیر کے لیے اُتار دیں،پیدل چلیں ،چیزوں کو دور اور نزدیک سے دیکھیں اور آنکھوں پر زور دے کر دور کی چیزوں کو آنکھیں جما کر دیکھنے کی کوشش کریں ۔اس سے آنکھوں کی ورزش اچھی ہوجاتی ہے۔
ہاتھوں کی ہتھیلیوں کی مدد سے آنکھوں کو آرام پہنچا یا جائے۔ اس کا طریقہ یہ ہے کہ پر سکون ہو کر بیٹھیں۔
اپنی کہنیاں میز پر رکھیں ،دونوں ہاتھوں کو ملا کر پیالہ نما شکل بنالیں،انگلیوں کو آپس میں ملا لیں،اب اس سے دونوں آنکھوں کو ڈھک دیں۔ خیال رہے کہ ہاتھ آنکھوں سے مس نہ ہوں۔ناک کے ذریعے سے سکون سے سانس لیں ۔آنکھوں کو پر سکون طریقے سے بند رکھیں اور اس حالت کو اس وقت تک قائم رکھیں جب تک پتلیوں کے پیچھے کی تمام روشنی غائب نہ ہو جائے۔جب تک مکمل اندھیرا ہو گا، آپ کی آنکھیں آرام محسوس کریں گی۔
دن میں دو یا تین مرتبہ یہ عمل دہرائیں ،اس عمل سے بصارت میں بہتری آتی ہے۔
آنکھوں کو ایک یا دومنٹ بند کرکے کھولیں اور نظر کو جانچنے والے حروف تہجی لکھے ہوئے کا ر ڈ پر ایک سیکنڈ کے لیے نگاہ کو مر کوز رکھیں تو بصارت میں بہتری محسوس ہو گی۔
آنکھوں کو صحت مند رکھنے کے لیے آنکھوں کا جھپکانا بھی ایک ہلکی پھلکی ورزش ہے۔بالائی پتلی میں ایک چھوٹاسا غدود پایا جاتا ہے جس میں موجود سیال آنکھ کے ڈھیلے کو نم رکھتا ہے ،جب آنکھ کو جھپکایا جاتا ہے تو سیال آنکھ کے ڈھیلے کو صاف کر دیتا ہے۔

صحت مند آنکھوں کی علامت یہ ہے کہ وہ اکثر جھپکتی رہتی ہیں۔پلکیں جھپکنے کی شرح تیز روشنی میں بڑھ جاتی ہے۔سرد موسم میں اگر پلکیں جھپکائی جائیں تو اس سے آنکھ کی سطح گرم رہتی ہے اور بیرونی ہوا کے باعث خشکی سے بھی محفوظ ہو جاتی ہیں۔
یہ ضروری ہے کہ ہر پانچ سیکنڈ کے بعد اپنی آنکھیں ضرور جھپکائیں۔مطالعے کے دوران،کمپیوٹر کے استعمال کے وقت اور سورج کی روشنی میں یہ عمل مزید تیز کر دیں۔

سونے کے لیے بستر پر لیٹا جائے تو آنکھیں پر سکون ہوں، آنکھیں بند کرکے گہری گہری سانس لیں اور اندھیرے کو آنکھوں میں سمونے کی کوشش کریں۔
بصارت کو مزید بہتر کرنے کے لیے جسمانی ورزش مفید ہے۔آنکھوں کی صحت کا انحصار ان عضلات اور ان اعضاء پر ہے جو انہیں خون مہیا کرتے ہیں۔جب جسمانی صحت اچھی ہو گی تو آنکھوں میں تھکن کے آثار جلد نمایاں نہیں ہو ں گے۔

کھلی فضا میں ورزش کرنے سے دوران خون میں تیز آجاتی ہے ،قلب کی خون پمپ کرنے کی صلاحیت میں اضافہ ہو جاتا ہے۔اس کے نتیجے میں آنکھوں کو مہیاہونے والا خون شفاف ہو جاتاہے جو آنکھوں کو متحرک کرتا ہے،اعصاب کو تیزی سے اور صحیح پیغام پہنچانے میں مدد فراہم کرتا ہے۔اس لیے ورزش باقاعدگی سے کرنی چاہیے ،روزانہ کم از کم تیس منٹ کی چہل قدمی بصارت کے لیے مفید ہو سکتی ہے۔آنکھوں کی صحت کے لیے اُن کی صفائی کا خیال رکھنا بھی ضروری ہے۔ٹھنڈا پانی آنکھوں کی صفائی کرتا ہے۔پیالے میں ٹھنڈا پانی ڈال کر آنکھوں کو خوب اچھی طرح غسل دیں،آنکھوں کو پانی میں جھپکا ئیں۔

No comments:

Post a Comment

Post Top Ad

Your Ad Spot

Pages